جسمانی معذوری خاتون کے آہنی عزم میں رکاوٹ نہ بن سکا، تعلیم کے بعد کاروبار بھی کامیاب

ریاض(این این آئی )اپنے چھوٹے قد اور معاشرے میں درپیش چیلنجوں کے باوجود سعودی خاتون دانا الھاجری نے ناممکن سمجھے جانے والے چیلنج کو نہ صرف قبول کیا بلکہ اس میں کامیابی حاصل کی۔ مسابقتی مصنوعات کی ڈیزائننگ میں فرسٹ کلاس آنرز کے ساتھ بیچلر کی ڈگری حاصل کی۔ دانا الھاجری جدت کے ذریعہ خدمات انجام دے رہی

اور ڈیزائن میں جدید تکنیکی پیشرفت سے باخبر رہتی ہیں اور معیشت اور معاشرے میں اپنا حصہ ڈال رہی ہیں۔عرب ٹی و ی کے ساتھ ایک انٹرویو میں الھاجری نے مواصلاتی ویب سائٹس کے علمبرداروں کی جانب سے سماجی رابطوں پر خوشی کا اظہار کیا۔انٹرویو میں دانا نے اپنے چھوٹے قد پر بھی تبصرہ کیا اور کہا کہ چھوٹا قد ہی وہ فرق ہے جو مجھے دیگر طالبات کے درمیان چیلنجز اور مقابلے کے میدان میں ممتاز کر دیتا ہے۔ چھوٹا قد ہر مرحلے پر خود کو ثابت کرنے کی اہمیت کا احساس دلاتا ہے یہاں تک میں اپنی خواہش کردہ ہدف تک پہنچ جاتی ہوں۔ یونیورسٹی کی تعلیم سے لیکر حالیہ کامیابیوں تک خود اعتمادی نے ہی مجھے کامیابیاں دلائی ہیں۔انہوں نے کہا لوگ میرے بلند مرتبے اور کامیابی کو دیکھتے ہوئے میرے چھوٹے قد کو بھی دیکھتے ہیں، اس سے مجھ پر کوئی اثر نہیں پڑتا بلکہ کامیابی کیلئے میری ضد میں اضافہ ہوجاتا ہے۔ میں زندگی کے تمام مراحل میں اللہ پر ہی سب سے زیاہ بھروسہ کرتی ہوں۔ پھر میرا خاندان میرا معاون ہے۔ میں ہمیشہ اپنے آپ سے کہتی ہوں خوذ سے محبت کو بڑھا چڑھا کر پیش کرو کیونکہ خوذ سے محبت ناقابل شکست ہوتی ہے۔دانا الھاجری نے کہا میرے سامنے کوئی رکاوٹ نہیں تھی بلکہ چیلنجز تھے جن کا میں نے صبر کے ساتھ سامنا کرنے کا فیصلہ کیا، سب سے اہم چیلنجوں میں سے ایک اس کے چھوٹے قد کے بارے میں معاشرے کا نظریہ تھا۔

انہوں نے اپنی ماں اور بہنوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے اپنی تقریر کا اختتام کیا اور اپنی والدہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ماں اس جدوجہد اور حوصلے کے لیے بچپن سے میرے شانہ بشانہ اور ساتھ کھڑی تھیں۔ تم عظیم ہو، میری ماں، اور میں اس کے لیے اللہ کا شکر ادا کرتی ہوں۔

متعلقہ خبریں